Ganjapan Ka Ilaj

گنجا پن - Ganjapan ka ilaj kya hai - ganjepan ka desi ilaj janeay - Baldness treatment in Urdu - hair transplant ke fayde or nuksan

Ganjapan Ka Ilaj

گنجے پن کی بہت سی وجوہات ہیں۔ اکثر دیکھا گیا ہے کہ یہ موروثی(خاندانی) ہوتا ہے لیکن ہر شخص میں یہ موروثی نہیں ہوتا۔ اس کی دیگر وجوہات بھی ہیں جومندرجہ ذیل ہیں۔

 

گنجے پن کی وجوہات

.1

سر کی طرف جانے والی خون کی شریانوں کا تنگ ہو جانا۔

.2

سر پر کافی عرصے تک تنگ ٹوپی یا ہیٹ کیپ پہنے رکھنا۔

.3

خوراک میں معدنی نمکیات کی کمی۔

.4

جذباتی اور نفسیاتی دباؤ۔

 

خاندانی گنجاپن - باپ گنجا ہو گا تو کیا بیٹا بھی گنجا ہو گا؟

handani ganjapan ka ilaj

موروثی گنج میں دیکھا گیا ہے کہ بیٹا اسی عمر میں گنجا ہونا شروع ہو جاتا ہے جس عمر میں اس کا باپ گنجا ہوا تھا۔ قدرتی طور پر نوجوانوں میں یہ احساس پیدا ہوتا ہےکہ ان کا گنجا ہونا لازمی ہے۔ لہذا وہ بالوں کی طرف بہت کم توجہ دیتے ہیں۔ وہ خود اعتمادی کے جذبے سے عاری نظر آتے ہیں۔ باپ جو خود بھی اسی اندازے سے گنجا ہوا تھا اس خیال کو اور ہوا دیتا ہے کے گنجاپن اہک لاعلاج مرض ہے۔ یہ بکل غلط اور منفی انداز فکر ہے۔ اس آرٹیکل میں بیان کردہ طریقوں پرعمل کیا جاۓ تو اس مرض پر قابو پایا جا سکتا ہے۔

اکژ ہوتا یہ ہے کہ بچوں یا نوجوانوں کی وہی خوراک ہوتی ہے جو ان کے والدین کی ہوتی ہے۔ اور چونکہ گنجے پن کی وجوہات میں ایک وجہ ناقص یا غیر متوازن خوراک بھی ہے لہذا اگر باپ گنجا ہو تو بیٹا بھی ناقص غذا کی وجہ سے گنجا ہو جاتا ہے۔ اگر خوراک کو متوازن بنا لیا جاۓ تو موروثی گنجے پن سے نجات حاصل کی جا سکتی ہے۔

 

دوران خون میں کمی کی وجہ سے گنجاپن

baldness-ganjapan hone ke wajah

بالوں کی جڑوں کو شریانوں کے ذریعے خون پہنچتا ہے۔ شریانوں کا یہ نظام گردن سے ہو کر گزرتا ہے اور جب مریض تناؤ کا شکار ہوتا ہے تو گردن کے پٹھے اس قدر سکڑ جاتے ہیں کہ سر ہمیشہ ایک ہی زاویے پر رہتا ہے۔ وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ یہ پٹھے ایک ہی جگہ اکڑ جاتے ہیں اورمریض کواس حالت کا پتہ نہیں چلتا۔ اس کے نتیجے میں اس کا سر اور گردن آگے کی طرف جھک جاتے ہیں اور سر کی طرف خون کا دورہ رک جاتا ہے۔ نتیجہ یہ ہوتا ہے کہ خون میں شامل غذائیت بالو‌ں کی جڑوں تک نہیں پہنچ پاتی اور سر کا جو حصہ زیادہ متاثر ہو وہ گنجا ہونا شروع ہو جاتا ہے۔ سر کی چوٹی کا حصہ دل سے چونکہ نسبتاً زیادہ دورہوتا ہے اس لیے خون سر کی چوٹی تک دیر سے پہنچتا ہے اورعموماً یہی حصہ سب سے پہلے بالوں سے محروم ہوتا ہے۔

بعض اوکات سر میں دوران خون مناسب ہوتا ہے مگر پھر بھی سر پر بالوں میں کمی واقع ہو جاتی ہے۔ یہ صورتِ حال خون میں معدنی نمکیات کی کمی کی بنا پر پیش آتی ہے۔ یہ نمکیات بالوں کی نشوونما کے لیے بہت ضروری ہیں۔ آرٹیکل 'بالوں کیلیے کیا کھایا جاۓ' میں وہ تمام غذائیں بیان کردی گئ ہیں جو خون اور بالوں کو وافر مقدار میں غذائیت فراہم کرتی ہیں۔

 

ذہنی پریشانی گنجاپن پیدا کرتی ہے

ganjapan kyu hota ha or ess ka desi ilaj kia ha

ہر شحض زندگی میں مختلف جزباتی اور نفسیاتی کیفیات سے گزرتا ہے۔ اگر یہ کیقیات شدید ہوں تو ان سے ذہنی تناؤ پیدا ہو جاتا ہے۔ بالوں کی افزائش کا ہارمونز کی پیدائش کے ساتھ تعلق ہے اور ہارمونز کا انسان کی جذباتی کیقیت کے ساتھ گہرا تعلق ہے۔ اس لیے جب ہارمونز کی پیدائش متاثر ہوتی ہے تو سر کے بال گرنا شروع ہو جاتے ہیں۔ جب ذہنی تناؤ دور ہو جاتا ہے تو نئے بال پھر سے پیدا ہونا شروع ہو جاتے ہیں۔

 

گنجے پن کےعلاج کیلیے کچھ ہدایات

ganjepan ka ilaj kese krain

گنجےپن کےعلاج کیلیے دھوپ بہت زیادہ فائدہ مند ہے۔ جب بھی ممکن ہو بالوں کودھوپ پہنچانی چاہیۓ۔خصوصاً سر کے اس حصے کو جو بالوں سے محروم ہو۔ اس جگہ کو کچھ دیرتک دھوپ میں جلانا بالوں کو پھر سے اگانے کا ایک مثالی طریقہ ہے۔ بالوں کو تازہ ہوا کی بھی ضرروت ہوتی ہے۔ سرکی جلد تک ہوا پہنچانے کیلیے بالوں میں زور سے برش کرنا چاہیۓ۔ ماحول اور موسموں کے مختلف درجہ حرارت میں سر کی جلد کبھی سکڑتی اورکبھی پھیلتی ہے۔ اس طرح فاسد مواد خارج کرنے والےغدود میں تحریک پیدا ہوتی ہے اور وہ بہتر کارکردگی کا مظاہرہ کرتے ہیں۔ اگر بالوں کے گرنے اور گنجےپن کی وجوہات نفسیاتی اورجذباتی ہوں توحالات کو بہتر بنا کر ان کا تدارک کرنا چاہیۓ۔

 

سکالپ کمپریس کے ذریعے گنجے پن کا علاج

گنجےپن کےعلاج کیلیےسکالپ کمپریس کا استعمال بہت مفید ہوتا ہے چونکہ اس سے سر میں دوران خون تیز ہو جاتا ہے۔ اس لیے یہ بالوں کی دوسری بیماریوں میں بھی مفید ہے۔ سکالپ کمپرلیس کامقصدسرکودیرتک مرطوب حرارت پہنچاناہےجس سےاعصاب کوسکون ملتاہے۔ سکالپ کمپریس سے سر میں دوران خون تیز ہو جاتا ہے اور بالوں کی بیماری سے نجات پانے کیلیے مثالی ماحول پیدا ہوتا ہے جس کی بدولت بہترین نتائج واضح طور پر دیکھنے کو ملتے ہیں۔

 

سکالپ کمپریس استعمال کرنے کا طریقہ

scalp compress method for baldness in Urdu

سوتی کپڑے یا لینن کے کپڑے کی ایک ٹوپی بنائیں جو سر پر ذرا تنگ ہو۔ پھرایک اونی ٹوپی بنائیں جو پہلی ٹوپی سے معمولی سی بڑی ہو۔ سوتی کپڑے کی ٹوپی کو سرد پانی میں ڈبو کر نچوڑیں اور سر پر پہن لیں اور پھر فوراً اس کے اوپر اونی ٹوپی پہن لیں۔ اونی ٹوپی کو اپنی جگہ پر قائم رکھنے کیلیے ایک فیتے سے بھی باندھا جا سکتا ہے۔ اس طرح ٹوپیاں پہننے سے سر کو ایک خوشگوار گرمی محسوس ہونی چاہیۓ لیکن اگر دس منٹ تک سر کو گرمی محسوس نہ ہو بلکہ ٹھنڈک محسوس ہوتی رہے تو دونوں ٹوپیوں کو اتار دینا چاہیۓ اور ایک گھنٹے بعد پھر یہی عمل دہرانا چاہیۓ۔ یہ سکالپ کمپریس رات بھر لگا رہے تو کوئی حرج نہیں بلکہ مفید ہو گا۔ مگر یہ خیال رہے کہ اس سے سر کو ٹھنڈک محسوس نہ ہوتی ہو۔ صبح جاگنے کے بعد دونوں ٹوپیاں اتار دیں اور انہیں دھو لیں۔ جن لوگوں کے سر پر گھنے بال موجود ہوں ان کے لیےسوتی کپڑے کی اندرونی ٹوپی پہننا ضروری نہیں۔ وہ سر کو ٹھنڈے پانی میں ڈبو کر بالوں سے فالتو پانی نچوڑ دیں اور پھر سر پر صرف ایک موٹی اونی ٹوپی پہن لیں۔ سکالپ کمپریس کیلیے جو ٹوپیاں استعمال کی جایئں انہیں استعمال کے بعد دھو لینا چاہیۓ۔اس کے علاوہ ہفتے میں ایک بار ان ٹوپیوں کو ابلتے پانی میں ڈال کرجراثیم سے پاک کر لینا ضرروی ہے۔ مذکورہ سکالپ کمپریس عام طور پر تمام رات پہنے رکھنا چاہیۓ لیکن اگر یہ آرام میں خلل پیدا کرے تو اسے کسی بھی وقت اتارا جا سکتا ہے۔

 

گنجےپن کا سرجری کے ذریعے علاج

hair transplant surgery ke faide aur nuksan

گنجےپن کا علاج آپریشن کے ذریعے بھی کیا جا سکتا ہے۔ آپریشن کے ذریعے سر کے گنجے حصے پر صحت مند فالی کلز گاڑ دیۓ جاتے ہیں جو سر کی صحت مند جلد سے نکالے جاتے ہیں۔ اس طرح صحت مند فالی کلز اپنی نئی جگہ نۓ بالوں کو جنم دینا شروع کر دیتے ہیں۔ آپریشن کے ذریعے لگاۓ بال کئی برسوں تک قائم رہتے ہیں لیکن ان بالوں کے قرب وجوار میں سر کی جلد صحت مند بال پیدا کرنے کے قابل نہیں رہتی کیونکہ آپریشن سے لگاۓ گۓ بالوں کے فالی کلز خون سے زیادہ غذائیت جذب کرنا شروع کر دیتے ہیں اور پرانے فالی کلز غذا سے محروم رہ جاتے ہیں۔ مذکورہ صورت حال کے پیش نظر یہ بات یقین سے کہی جا سکتی ہے کہ آپریشن کے ذریعے بالوں کو ایک جگہ سے دوسری جگہ منتقل کر کے بھی مریض کوکوئی مستقل فائدہ نہیں ہوتا۔ مریض کوچند برسوں کے بعد پھرمایوسی کا منہ دیکھنا پڑتا ہے۔ اس کی بجاۓ اگر اوپر بیان کردہ طریقوں پرعمل کیا جاۓ تو آپریشن کی تکلیف اٹھاۓ بغیر سر پر صحت مند بال اگاۓ جا سکتے ہیں۔

Read in roman Urdu / roman Hindi

Ganjapan ki bohat si wajohaat hain. Aksar dekha gaya hai ke yeh moroosi (khandani) hota hai lekin har shakhs mein yeh moroosi nahi hota. Es ki deegar wajohaat bhi hain jo madarja-zail hain.

GANJEPAN KI WAJAH

1 .
Sir ki taraf jane wali khoon ki sharianon ka tang ho jana.
2 .
Sir par kaafi arsay tak tang topi ya heat cap pehnay rakhna.
3 .
khorak mein maadni namkiyat ki kami.
4 .
Jazbati aur nafsiati dabao.

KHANDANI GANJAPAN - BAAP GANJAA HO GA TO KYA BETA BHI GANJAA HO GA?

Moroosi ganj mein dekha gaya hai ke beta isi Umar mein ganjaa hona shuru ho jata hai jis umar mein is ka baap ganjaa hwa tha. Qudrati tor par nojawano mein yeh ehsas peda hota hai ke un ka ganja hona laazmi hai. Lehaza woh balon ki taraf bohat kam tawajah dete hain. Woh khud etmadi ke jazbay se aari nazar atay hain. Baap jo khud bhi isi andazay se ganja howa tha is khayaal ko aur haawa deta hai ke ghanja-pan aik la-ilaj marz hai. Yeh bohat ghalat aur manfi andaaz-e-fikar hai. Es article mein bayan kardah tareeqon par aml kya jae to is marz par qaboo paaya ja sakta hai.
Aksar hota yeh hai ke bachon ya nojawano ki wohi khoraak hoti hai jo un ke walidain ki hoti hai. Aur chunkay gunjay pan ki wajohaat mein aik wajah naaqis ya ghair mutawazan khoraak bhi hai lehaza agar baap ganjaa ho to beta bhi naaqis ghiza ki wajah se ganjaa ho jata hai. Agar khoraak ko mutawazan bana liya jae jo balon ke nasho numa ke liay behtareen ho to moroosi gunjay pan se nijaat haasil ki ja sakti hai. 
Sehat mand balon ke liye kia khaen? mazmoon ma ayse tamam ghizao ka zikr mojood ha jo balon ke liay behad mufeed hn. 

DOURAN KHOON MEIN KAMI KI WAJAH SE GANJAPAN

Balon ki jaroon ko shariano ke zariye khoon pohanchta hai. Shariano ka yeh nizaam gardan se ho kar guzarta hai aur jab mareez tanao ka shikaar hota hai to gardan ke pathay is qader suker jatay hain ke sir hamesha aik hi zawiye par rehta hai. Waqt guzarnay ke sath sath yeh pathay aik hi jagah akarr jatay hain aur mareez ko is haalat ka pata nahi chalta. Es ke nateejay mein is ka sir aur gardan agay ki taraf jhuk jatay hain aur sir ki taraf khoon ka dora ruk jata hai. Nateeja yeh hota hai ke khoon mein shaamil ghizaiyat balon ki jaroon tak nahi pahonch paati aur sir ka jo hissa ziyada mutasir ho woh ganja hona shuru ho jata hai. Sir ki chouti ka hissa dil se chunkay nisbatan ziyada dour hota hai is liye khoon sir ki chouti tak der se pohanchana hai aur amuman yahi hissa sab se pehlay balon se mahroom hota hai.
Baaz oqaat sir mein douran-e-khoon munasib hota hai magar phir bhi sir par balon mein kami waqay ho jati hai. Yeh surat_e_ haal khoon mein maadni namkiyat ki kami ki bana par paish aati hai. Yeh namkiyat balon ki nashonuma ke liye bohat zaroori hain.

ZEHNI PARESHANI GANJAPAN PEDA KARTI HAI

Har shakhs zindagi mein mukhtalif jazbati aur nafsiati kaifiyat se guzarta hai. Agar yeh kefiat shadeed hon to un se zehni tanao peda ho jata hai. Balon ki afzaish ka harmons ki paidaiesh ke sath talluq hai aur harmons ka insaan ki jazbati kefiat ke sath gehra talluq hai. Es liye jab harmons ki paidaiesh mutasir hoti hai to sir ke baal girna shuru ho jatay hain. Jab zehni tanao daur ho jata hai to naye baal phir se peda hona shuru ho jatay hain.
Zehni pareshani - Depression ka ilaj mazmoon ma ess se niptane ka mukamil ilaj biyan kia gia ha.

GANJEPAN KE ILAJ KE LIYE KUCH HADAYAT

Ganjapan ka ilaj mumkin ha. Es ke ilaj ko faroogh dene ke liye dhoop bohat ziyada faida mand hai. Jab bhi mumkin ho balon ko dhoop pohanchani chaheay. khasosan sir ke is hissay ko jo balon se mahroom ho. Es jagah ko kuch der tk dhoop mein jalana balon ko phir se ugane ka aik misali tareeqa hai sabit ho sakta ha. Balon ko taaza hawa ki bhi zarorat hoti hai. Sar ki jald tak hawa pohanchanay ke liye balon mein zor se brush karna chaheay. Mahol aur mousamoo ke mukhtalif darja-hararat mein sir ki jald kabhi sukarti aur kbhi phelti hai. Es terhan fasid mawaad kharij karne walay ghudood mein tehreek peda hoti hai aur woh behtar karkardagi ka muzahira karte hain. Agar balon ke girnay aur ganjepan ki wajohat nafsiati aur jabati hon to halaat ko behtar bana kar un ka tadaruk karna chaheay.

SCALP COMPRESS KE ZARIYE GANJEPAN KA ILAJ

Ganjepan ke ilaj k liay scalp compress ka istemaal bohat mufeed hota hai chunkay is se sir mein douran khoon taiz ho jata hai. Es liye yeh balon ki doosri bimarion mein bhi mufeed hai.Scalp compress ka maqsad sar ko der tak martoob hararat pohanchana ha jis se asaab ko sakoon milta rhe. Scalp compress se sir mein douran khoon taiz ho jata hai aur balon ki bemari se nijaat panay ke liye misali mahol peda hota hai jis ki badolat behtareen nataij wazeh tor par dekhnay ko miltay hain.

SCALP COMPRESS ISTEMAAL KARNE KA TAREEQA

Soti kapray ya linen ke kapray ki aik topi banayen jo sir par zara tang ho. Phir aik ooni topi banayen jo pehli topi se mamooli si barhi ho. Soti kapray ki topi ko sard pani mein dubo (dip) kar nachorain aur sir par pehan len aur phir foran is ke oopar ooni topi pehan len. Ooni topi ko apni jagah par qaim rakhnay ke liye aik feetay se bhi baandha ja sakta hai. Es terhan topian pahannay se sir ko aik khushgawar garmi mehsoos honi chaheay lekin agar 10 minute tak sir ko garmi mehsoos nah ho balkay thandak mehsoos hoti rahay to dono topyon ko utaar dena cheheay aur 1 ghantay baad phir yahi amal duhrana chaheay. Yeh scalp compress raat bhar laga rahay to koi harj nahi balkay mufeed ho ga. Magar yeh khayaal rahay ke is se sir ko thandak mehsoos nah hoti ho. Subah jaagne ke baad dono topian utaar den aur enhen dho len. Jin logon ke sir par ghany baal mojood hon un ke liye soti kapray ki androoni topi pehnana zaroori nahi. Woh sir ko thanday pani mein duubo kar balon se faaltu pani nichor den aur phir sir par sirf aik mouti ooni topi pehan len. Scalp compress ke liye jo topian istemaal ki jain enhen istemaal ke baad dho lena chaheay. Es ke ilawa haftay mein aik baar un topyon ko ubaltay pani mein daal kar jaraseem (germs) se pak kar lena zarori hai. Mazkoorah scalp compress aam tor par tamam raat pehnay rakhna chaheay lekin agar yeh aaraam mein khlal paida kere to esay kisi bhi waqt utaara ja sakta hai.

GANJEPAN KA SURGERY KE ZARIYE ILAJ

Ganjepan ka ilaj operation ke zariye bhi kiya ja sakta hai. Operation ke zariye sir ke gunjay hissay par sehat mand follicles garh diay jatay hain jo sir ki sehat mand jald se nikalay jatay hain. Es terhan sehat mand follicles apni nai jagah nae balon ko janam dena shuru kar dete hain. Ganj pan ke surgery ke zariye lagae baal kai barson tak qaim rehtay hain lekin un balon ke qurb-o-jawar mein sir ki jald sehat mand baal peda karne ke qabil nahi rehti es ke bari wajah yeh ha ke operation se lagae gay balon ke follicles khoon se ziyada ghizaiyat jazb karna shuru kar dete hain aur puranay follicles ghiza se mahroom reh jatay hain. Mazkoorah soorat-e-haal ke paish-e-nazar yeh baat yaqeen se kahi ja sakti hai ke operation ke zariye balon ko aik jagah se doosri jagah muntaqil kar ke bhi mareez ko koyi mustaqil faida nahi hota. Mareez ko chand barson ke baad phir mayoosi ka mun dekhna parta hai. Es ki bajae agar oopar bayan kardah tareeqon par amal kya jae to operation ki takleef uthae baghair sir par sehat mand baal ugae ja satke hain.