Bimari Me Kya Khana Chahiye - Mareez Ke Liye Mufeed Ghiza

مریضوں کے لیےمفیدغذائی قوانین - Healthy food for the patients in Urdu - Diet plan for patients

Bimari Me Kya Khana Chahiye - Mareez Ke Liye Mufeed Ghiza

بیماری کی حالت میں غذاؤں کے استعمال کا مسئلہ بہت ہی نازک اور اہم ہے کیوں کہ اگر بہتر دوائی استعمال کرائی جائے مگر غذا کا استعمال صحیح اور حسب موقع نہیں ہے توعلاج میں کامیابی ممکن نہیں۔ اس لئے غذا کے دینے نہ دینے اور غذا کے تجویز کرنے میں معالج کو نہایت فراست کے ساتھ یہ اندازہ قائم کرنا چاہیے کے بغیر غذا کے مریض کی قوت کب تک قائم رہ سکتی ہے۔ چنانچہ اس اندازہ کے مطابق حسب ضرورت ہلکی یا بھاری غذا تجویزکی جائے یا پھر فاقہ کرایا جائے۔ اس اندازہ کے لیے مریض کے دیگر حالات موجودہ کے ساتھ یہ دیکھنا اہم ہے کہ مریض کیسا ہے یعنی غذا دینے میں کوئی خطرہ پیش ہے یا نہیں۔ بعض اوقات ساقط کرانے سے مریض نڈھال ہو جاتا ہے اور اس کی قوت جواب دے دیتی ہے اور اگر اس کو غذا دی جائے تو مرض کے خطرناک حد تک بڑھ جانے کا اندیشہ غالب آ جاتا ہے۔ چنانچہ اگر ایسی صورت پیش آ جائے تو قوت کا قائم رکھنا ضروری ہو جاتا ہے۔ لہذا مریض کو نہایت ہی ہلکی غذا تجویز کر دینا چاہیے۔

bukhar ma kia khana chaheay

اگر مریض کو بخار ہو تو اس صورت میں فاقہ کی برداشت بہت زیادہ ہوجاتی ہے۔ چنانچہ بخار کی حالت میں کافی عرصہ تک مریض بغیر غذا کے پڑا رہ سکتا ہے لیکن اگر اسی شخص کو تندرستی کی حالت میں بھوکا رکھا جائے تو وہ دودن میں اپنی حالت خراب ہونے میں خود کو پائے گا۔

غذا میں کمی کرنے کی تین صورتیں ہیں

    نمبر1 ۔ غذا کی مقدار میں کمی کی جائے۔

نمبر2 ۔ غذا کی کیفیت یعنی اس کی غذائیت میں کمی کی جائے۔

نمبر3 ۔ غذا کی مقدار اور غذائیت دونوں میں کمی کی جائے۔

یہ سمجھنا بھی ضروری ہے کہ غذا کی مقدار اور اس کی غذائیت میں کیا فرق ہے؟ بعض غذائیں ایسی ہوتی ہیں جن کی مقدار تو زیادہ ہوتی ہے لیکن ان میں غذائیت کم ہوتی ہے جیسے شلجم، لوکی، پالک وغیرہ وغیرہ۔ اس کے برعکس بعض غذائیں ایسی ہوتی ہیں جن کی مقدار تو کم ہوتی ہے لیکن ان میں غذائیت زیادہ ہوتی ہے۔ کچھ صورتوں میں غذا کی مقداراور غذائیت دونوں کو زیادہ کرنا پڑتا ہے یعنی زیادہ مقدار میں غذائی دی جاتی ہیں۔ ایسی صورت اس وقت پیش آتی ہے جب کہ بھوک لگتی ہو یا ہاضمہ بالکل درست ہواور جسم کو قوت پہنچانے کی ضرورت ہو۔ 

insani jism ke leay gosht ke faide

غذاؤں کو بالکل ترک کر دینا (فاقہ کرانا) ہر موقع پر جائز نہیں کیوں کہ بہت سے لوگ فاقہ کو برداشت نہیں کر سکتے اور زیادہ کھانے کے عادی ہوتے ہیں۔ اسی طرح طاقتور اور موٹے اشخاص، بوڑھے اور بچے بھی بھوک زیادہ برداشت نہیں کرسکتے۔ چنانچہ اگر ایسے لوگوں کو فاقہ کرایا جائے تو ان کو بہت جلد زیادہ کمزوری، لاغری اور غشی پیدا ہو جاتی ہے۔

گرم امراض جیسے بخاراگرکسی شخص کو ہو تو ایسی صورت میں مریض کو گوشت یا شوربہ دیے جائیں تو اس میں سبز ٹھنڈی ترکاریوں میں سے کوئی نہ کوئی سبزی مثلاً لوکی، پالک وغیرہ ضرور شامل کر دی جائے۔ اگر نزلہ، زکام اور کھانسی نہ ہو تو گوشت اور شوربے میں لیموں کا رس وغیرہ شامل کر دینا بہت ہی مفید ثابت ہوتا ہے۔

گرم امراض جیسا کہ بخار وغیرہ میں اگر سبزیاں یا شوربے دیے جائیں تو ان میں گرم مصالحہ مثلاً ہلدی، سرخ مرچ، لہسن وغیرہ قطعی شامل نہ کی جائیں یا بہت ہی زیادہ کم مقدار میں ان کو شامل کیا جائے۔ البتہ سبز دھنیا، گلاب کے پھول، زیرہ سفید کی شمولیت حد درجہ مفید ہے۔ 

واضح رہے کہ امراض کے لحاظ سے غذائی تجویز کی جاتی ہیں اور ان کی مناسبت سے دوا دی جاتی ہیں۔ ہم یہاں پر کچھ ایسی غذاؤں کا ذکر کرنے چلے ہیں جن کو نہایت شدید امراض میں اور بہت تیز بخار خصوصا ٹائیفائیڈ وغیرہ میں تجویز کیا جاتا ہے۔ ان میں سے پھلوں کے رس اور ترش چیزوں کو نزلہ زکام اور سرد امراض مثلاً فالج وغیرہ میں ہرگز استعمال نہ کرایا جائے۔

فالج اور لقوہ ہونے کی صورت میں شہد کا پانی استعمال کرنا بہت ہی زیادہ مفید ہے۔

mareezo ke leay halki ghiza

بہت زیادہ لطیف( ہلکی) غذائیں مندرجہ ذیل ہیں۔

۔ موسمی پھل کا مشروب۔

۔ انار کا مشروب۔

۔ تربوز کا مشروب۔

۔ دودھ کا پھاڑا ہوا پانی۔

۔ گلوکوز۔

۔ پانی میں پکا ہوا نہایت پتلا ساگودانہ۔

۔ انگور کا مشروب۔

۔ سنگترے کا مشروب۔

۔ سکنج بین سادہ 25 ملی لیڈرکوعرق گلاب125 ملی لیٹر میں گھول کر تیار کیا ہوا محلول۔

۔ شہد کا پانی جو30ملی لیٹر شہد کو500 ملی لیٹر پانی میں جوش دے کر400 ملی لیٹر تیار کیا گیا ہو۔

مذکورہ بالا غذائیں بہت ہی زیادہ لطیف ہیں۔ ان کو نہایت شدید مرض میں تجویز کیا جاتا ہے۔

Read in roman Urdu / roman Hindi

Bimari ki halat mai ghizaon ke istemal ka masla bohat hi nazuk aur aham hai qu ke agar behtar dawai istemal krai jay magar ghiza ka istemal sahi aur hasb-e-moqa nahi hai tou ilaj mai kamyabi mumkin nahi. Is liye ghiza ke daine ya nah daine aur ghiza ke tajweez karne mai hakeem/doctor ko nahayat farasat ke sath yeh andaza qaim karna chahiye ke baghair ghiza ke mareez ki quwat kab tak qaim rah sakti hai. Chunancha is andazah ke mutabiq hasb-e-zrurat halki ya bhari ghiza tajweez ki jye ya phir mareez ko faqa (Khali pait rehna) kraya jye. Is andaza ke liye mareez ke deegar halaat-e-mojoodah ke sath yeh dekhna aham hai ke mareez kaisa hai yani ghaza dene mai koi khatra pesh ho sakta ha ya nahi. Baz aukat faqa karane se mareez nidhaal ho jata hai jis se uski quwat jawab de deti hai aur agar usko ghiza di jye tou marz ka khatarnak had tak badh jane ka andesha ghalib aa jata hai. Lehaza agar aesi surat pesh aa jye tou quwat ka qaim rakhna zruri ho jata hai. Ess liay mareez ko nahayat hi halki ghiza tajweez kar dena chahiye.

Agar mareez ko bukhar ho tou is surat mai faqa ki bardasht bohat ziada ho jati hai. Chunancha buhar ki halat mai kafi arsa tak mareez bagher ghiza ke pada rah sakta hai lakin agar esi shakhs ko tandarusti ki halat mai bhukha rakha jye tou wo do din mai apni halat kharab hone mai khud ko pye ga.

Ghiza mai kami karne ki teen surtain hain:

1. Ghaza ki miqdar mai kami ki jye.

2. Ghaza ki kefiyat yani iski ghazayat mai kami ki jye.

3. Ghaza ki miqdar aur ghazayat dono mai kami ki jye.

Yeh samajhna bhi zruri hai ke ghaza ki miqdar aur is ki ghizayat mai kia faraq hai. Baz ghizayain aesi hoti hain jin ki miqdar tou ziyadha hoti hai lakin en mai ghizayat kam hoti hai jese shaljam, loki, palak waghera. Iske bar-aks baz ghizayain aesi hoti hain jin ki miqdar tou kam hoti hai lakin un mai ghizayat ziyadha hoti hai. kuch suraton main ghiza ki miqdar aur ghizayat dono ko ziyadha karna parta hai yani ziyadha miqdar mai ghizayain di jati hain. Aesi surat us waqat pesh ati hai jab ke mareez ko bhukh lagti ho ya hazma bilkul durust ho aur jisam ko quwat pohanchane ki zrurat ho.

Ghazaon ko bilkul tark kar dena (faqa krana) har muqa par jyez nahi qu ke bohat se log faqa ko bardasht nahi kar sakte aur ziaydha khane ke adi hote hain. Esi tarhan taqatwar aur mote ashkhaas ,budhe aur bache bhi bhukh ziyadha bardasht nahi kar sakte. Lehaza agar aese logo ko faqa karaya jye tou unko bohat jald ziyadha kamzori ,laghri aur ghashi peda ho jati hai.

Garam amraaz jese buhar agar kisi shakhs ko ho tou aesi surat mai mareez ko gosht ya shorba diya jye tou is mai sabz thandi taseer mai se koi na koi sabzi maslan loki, kadu, palak waghera zarur shamal kar di jye. Agar nazla, zukam aur khansi nah ho tou gosht aur shorbe mai lemo ka ras shamal kar dena bohat hi mufeed sabat hota hai.

Garam amraaz mai agar sabzian or shorbe/soup deye jayein tou in mai garam masala maslan haldi, surkh mirch, lehsan waghera bilkul shamal nah ki jyein ya bohat hi ziyadha kam miqdar mai inko shamal kya jye. Albata sabz dhaniya, ghulab ke phul, zera safed ki shamuliyat had darja mufeed hai.Wazeah rahe ke amraaz kay lehaz se ghizain tajweez ki jati hain aur inki munasbat se dawa di jati ha.

Ham yahan par kuch aesi ghizaon ka zikar karne chale hain jin ko nihayat shadeed amraaz mai aur bohat tez buhar khasusan typhoid waghera mai tajweez kiya jata hai. In mai se phalon ke ras aur khati chezon ko nazla zukam aur sard amraaz maslan faalij waghera mai mareez ko hargiz istemal nah karaya jye. Falij aur laqwah hone ki surat mai shehad ka pani istemal karna bohat hi ziyadha mufeed hai.

Bohat Ziyadha Latif(halki) Ghazayien Mandarja Zel Hain:

1. Mosami phal ka mashroob.

2. Anaar ka mashroob.

3. Tarbooz ka mashroob.

4. Doodh ka phada hua pani

5. Glucose.

6. Pani mai paka hua nahayat patla sagudana.

7. Angoor ka mashroob.

8. Sangtare ka mashroob.

9. Sakanj-been sadha 25 ml ko arq e ghulab 125 ml mai ghol kar tyar kya hua mahlol/mixture.

10. Shehad ka pani jo 30 ml shehad ko 500 ml pani mai josh de kar 400ml tyar kya gya ho.

Mazkurah-bala ghazayein bohat hi ziyadha latif hain. In ko nahayat shadeed marz mai tajweez kiya jata hai.