Aalu Ke Fayde - Achi Sehat Ke Liay Zaroori

آلوکے فائدے - Advantages of potato - آلوکی تاثیر - آلوایک مکمل غذا

Aalu Ke Fayde - Achi Sehat Ke Liay Zaroori

شناخت

آلو ایک ایسی کثیر ترکاری ہے کہ آج دنیا کا کوئی ملک اس کی افادیت سے انکار نہیں کرسکتا۔ اکثر ممالک میں آلو بطورسبزی ہی نہیں بلکہ ایک مکمل غذا کی مانند استعمال کیا جاتا ہے۔ آلو کا اصل وطن امریکہ ہے۔ سترہویں صدی میں سر والٹر ریلے اس کو امریکہ سے انگلینڈ لائے تھے جس کے ڈیڑھ سو برس بعد یہ ہندوستان لایا گیا۔ آلو کے پتے چھوٹے چھوٹے پودینے کی طرح ہوتے ہیں. اگر اس کی بیل کی شاخ کو زمین میں چھپا دیا جائے تو اس کی جڑ کے ہر تار میں آلو کے دانے برابر پیدا ہوکر تھوڑی سی مدت میں خوب بڑھ جاتے ہیں۔ آلو ہی اس کا بیج ہے۔

aalu ke faide

مزاج

گرم و خشک

 

فوائد

آلواجزائےمنی زیادہ پیدا کرتا ہے اورمنی کو گاڑھا کرتا ہے۔ جسم کو موٹا کرتا ہے۔ اس میں سٹارچ بہت زیادہ مقدار میں پایا جاتا ہے اس لیے یہ لاغر اور کمزور لوگوں کے لئے زیادہ منافع بخش ہے۔ ترکاری اس کی لذیذ ہوتی ہے اور تقریبا مختلف طرح سے پکا کر استعمال کیا جاتا ہے۔ مثانے کو قوت دیتا ہے، اس کو پیس کر آنکھوں میں لگانا نظرکیلیے مفید ہےکیونکہ جالا کو کاٹتا ہے ۔ آلوقابض ہے اور سدا ویت رکھتا ہے۔ آلوکوزیادہ کھانے سے سوداوی امراض پیدا ہو جاتے ہیں۔

sehat ke leay aalu ke ehmiat

آلو کے کھانے سے پاخانہ گاڑھا ہو جاتا ہےاور بدن میں سستی پیدا ہوتی ہے۔ پیشاب کو بڑھاتا ہے، بادی اور بلغم پیدا کرتا ہے۔ آلو جسم میں موجود طاقت کو بڑھاتا ہےاورخون کے جوش کو مٹاتا ہے۔ اگر کوئی شخص جس کا ہاضمہ صحیح نہ ہو بلکہ ضعیف ہو، وہ اگر اس سے کو زیادہ مقدار میں استعمال کرے تو اس کی وجہ سے اس شخص کا پیٹ پھول جائے گا کیوں کہ آلو دیرسےہضم ہوتا ہے۔

jild ke leay aalu ke faide

آلو کو اگر کچا پیس کر جلی ہوئی جگہ پر لگایا جائے تو اس سے بہت جلد آرام ملتا ہے. آلو کو چھلکے سمیت نہیں استعمال کرنا چاہیے کیونکہ چھلکے سمیت استعمال کرنے سے ایسیڈٹی پیدا ہوتی ہے۔ اگر کسی مریض کو ایسیڈٹی کی شکایت ہو تواسکو ابلا ہوا آلو چھیل کر استعمال کرانے سے ایسیڈٹی میں افاقہ ہوتا ہے۔ آلو دنیا کی ایسی سبزی ہے جو ہر موسم میں پائی جاتی ہے۔

Read in roman Urdu / roman Hindi

Aalu ki Shanakht

Aalu aik aisi kaseer tarkari(sabzi) hai keh aaj dunya ka koi mulk iski afadiyat se inkar nahi kar sakta. Aksar mumalik mai aalu bator sabzi hi nahi balke aik mukammal ghiza ki manind istemal kia jata hai. Aalu ka asal watan America hai. 17 (AD) mai sir walter raleigh isko America se England lay thay jis ke 150 saal bad yeh Hindustan laya gya. Aalu ke patte chote, podine ki tarah hote hain. Ager iski bel ki shakh ko zameen mai chppa diya jye to iski jar ke har tar mai aalu ke dane kay brabar paida ho kar thodi si muddat mai khub badh jate hain. Aalu hi iska beej hai (Aalu apna beej hud ha).

 

Aalu Ki Taseer | Mizaj

Garm o Khushk.

 

Aalu ke Fawaid

  • Aalu mardana taqat(manni) ziyadha paida karta hai aur manni ko garah karta hai.
  • jism ko mota karta hai.
  • Aalu me starch bohat ziyadha miqdar mai paya jata hai is liye yeh laghar aur kamzor logon ke liye ziyadha munafah bakhsh hai.
  • Metha aalu boht laziz hota ha aur taqreeban mukhtalif tarah se pakka kar istemal kiya jata hai.
  • Masane ko quwat deta hai.
  • Isko pees kar ankhon mai lagana nazar ke liye mufeed hai kuke ankh ke jalaa ko kat,ta hai.
  • Aalu kabiz hai aur sadawiyat rakhta hai.
  • Aalu ko ziyadha khane se sodawi amraz paida ho jate hain.
  • Aalu ke khane se pakhana gadha ho jata hai aur badan mai susti paida hoti hai.
  • Paishab ko badhata hai, badi aur balgham paida karta hai.
  • Aalu jism mai mojud takkat badhata hai aur khon ke josh ko mitata hai.
  • Agar koi shakhs jis ka haazma sahi nah ho balke zaef ho, woh agar aalu ko ziyadha miqdar mai istemal kare to iski waja se uska pait phool jaye ga kuke aalu dair se hazam hota hai.
  • Aalu ko agar kacha pees kar jali(burn) hui jaga par lagya jaye to is se bohat jald aram milta hai.
  • Aalu ko chilke samait nahi istemal karna chahiye kuke chilke samait istemal karne se acidity paida hoti hai.
  • Agar kisi mareez ko acidity ki shakyat ho to usko ubla hua aalu cheel kar istemal karane se acidity mai afaqa hota hai.
  • Aalu duniya ki aisi sabzi hai jo har mosam mai pai jati hai.